وڈیو گیمز

اسامہ طفیل نے 'اركان مجلس كے مضامين' میں ‏ستمبر 1, 2013 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. اسامہ طفیل

    اسامہ طفیل نوآموز

    شمولیت:
    ‏اگست 5, 2013
    پیغامات:
    198
    اسلام علیکم ورحمتہ اللہ!
    اس مضمون میں وڈیو گیمز اور ان کی حقیقت پر بات کی گئی ہے اور اس کے اثرات کا جائزہ پیش کیا گیا ہے میری کوشیش ہے وہ مضامین تحریر کروں جن باتوں کو معمولی سمجھ کر نظر انداز کر دیا جاتا ہے.تو آپ کی رائے بہت مددگار ہوگی


    وڈیو گیمز کو ہمارے ہاں پجوں کا کھیل سمجھا جاتا ہے آج سے دس سال پہلے تو یہ بات ٹھیک ہوسکتی ہے پر اب نہیں وڈیو گیمز کی اربوں کی مارکیٹ ہے آج ایک بڑی گیم بنانے پر 20 سے 60 کروڑ لاگت آتی ہے ایک گیم پر 200 سے 600 لوگ کام کرتے ہیں اور اس کا نشانہ بڑے ہیں بچیے نہیں .جہاں اب وڈیو گیمز میں فحاشی کی مربھار ہے وہاں لوگوں کی سوچ،مزاج اور رویوں پر بھی حاوی ہیں

    [​IMG]
    غریب عوام کی شاہ خرچیاں


    وڈیو گیمز پاکستان کے ساتھ دنیا بھر میں مقبول ہے یہ غریب ممالک کے غریب لوگ وڈیو گیمز پر ہزاروں سے لاکھوں خرچ کرتے ہیں پاکستان میں وڈیو گیمز کی اچھی خاصی مارکیٹ ہے جس میں دوکان دار گیمنگ کنسولز کی قیمت ڈالر سے کنورٹ کرنے کے بعد بھی من مانی قیمت وصول کرتے ہیں جیسے ایک مقبول کنسول سونی پلے سٹیسن تھری جب پاکستان میں آیا لوگون نے ایک سے سوا لاکھ میں خریدا جب کے اس کی اصل قیمت 28 ہزار سے ذیادہ نہ تھی اب بھی لوگ اس کو 32 سے 38 ہزار میں خریدتے ہیں اور ایک گیم کی بلو رے 5 ہزار سے 3500 میں خریدی جاتی ہے اگر پائرٹ بھی کرلیں ایک گیم کے 500 دینے ہوں گے مائکروسافٹ کا ایکس باکس 360 جس کی قیمت 22000 ہیں 32000 سے 45000 ہزار میں خریدا جاتا ہے کمپوٹر پر گیمزکے لے ۱5000 ،25000،50000 تک کے گرافک کارڈ لگائے جاتے ہیں پھر یہ کافی نہیں ہینڈ ہلیڈ کنسول بھی ہونا چاہے تاکہ باتھ روم اور کسی بھی جگہ پر ساتھ لے جایا جاسکے اور ان کی قیمتوں کا بھی یہی حال ہے


    وڈیو گیمز کے اثرات


    جس طرح اسشتہاری کمپنی والے خواتین کی نفسیات سے وقف ہوتے ہے اور ایسے اشتہار بناتے ہیں جو خواتین کو جلد متاثر کریں، گیمز بنانے والے انسانی نفسیات کے ماہر ہوتے ہے وڈیوگیمز ایسے بنائی جاتی ہیں کھلنے والے کو ایک جگہ جوڑ دیا جائے کہانی اور گیم پلے سے اس کو زیادہ سے زیادہ متاثر کیا جائے اور اس کو جذباتی تور پر اس خیالی دنیا سے منسک کر دیا جائے اور اس کے جذبات کی تسکین ہوسکے کبھی شہوت انگیز مناظر کے ساتھ کبھی آپ کو ہیرو بنا دیا جاتا ہے یہی وجہ ہے لوگ حقیقی دنیا کو چھوڑ کر اس دنیا کا رخ کرتے ہیں وہاں آپ کو کوئی پرشانی نہیں ہر چیز پر آپ کا راج ہوتا ہے جسے چاہیں قتل کر دیں جس سے نفرت ہے اس کا نام کسی کردار پر رکھیں اور پھر چاہیں گردن اوتار دے کوئی مسلہ نہ ہوگا نا آپ کو کوئی نصیحت کرے گا نا کوئی پابندی ہوگی حقیقی دنیا میں آتے ہی آپ پر حقیقت آشکار ہوتی ہے آپ کتنے کمزور ہے ڈھیروں ذمہ داریاں گھیر لیتیں ہے گیمز کی دنیا میں آپ پرفیٹ ہیں
    اس وجہ سے گیم کا کھلاڑی اسی دنیا میں مگن رہتا ہے اگر بچہ ہے تو ماں ہزار آوازے دے آتا ہو امی کے بعد پھر مگن ہوجاتا ہے بڑا ہوتو غصۂ کا اظہار کرتے ہوئے منہ بنا لے گا ماں باپ کہتے ہیں چلو اچھا ہے باہر آوارا گردی نہیں کر راہا پر بچے کی ذہنی تبدیلی سے بے خبر ہوتے ہیں بڑا ہے تو آپ کو وقت نا دے گا ہر چیز میں اپنی من مانی کی کوشیش کرے گا اور زیادہ جذباتی اور پر تشدد رویہ اختیار کرے گا خود اعتمادی کی کمی ہوگی اپنی ہر بات کی تعمیل ضروری سمجھے گا

    ایک نئی رپورٹ بتاتی ہے دنیا میں ایسے لوگوں کا اضافہ ہورہا ہے جو 14 سے 45 گھنٹے آن لائن گیمز کھیتے گزار دیتیں ہے پھر نا کسی کام کا ہوش نا سونے کا بس نشہ پورا ہونا چاہے


    وڈیو گیمز اور مسلمان

    مسلمانوں اور اسلام کو طن کا نشانہ بنانا ان کے جذبات سے کھینا چونکہ دنیا کا سب سے آسان کام ہے تو گیم بنانے والے کیوں پیچھے رہیں اور ان گیمز کو مسلمان بھی کھیلتے ہیں


    Little Big Planet(

    اذان میں ساز ڈال کر پیچھے چلنے والی موسقی کے تور پر استعمال کیا گیا پر گیم مارکیٹ میں آنے سے پہلے ہی بات لیک ہوگئی امارات سونی کی گیمز کی بڑی مارکیٹ ہے امارات کے لوگوں اور دوسرے مسلمانوں کی شدید مذمت اور گیم سے بائی کاٹ کی دھمکی کے سبب سونی ‏‎ Sonyنے معذرت کرتے ہوئے گیم سے اذان نکال دی


    Call Of Duty Modern warfare 1,2

    یہ گیم مسلمانوں میں بہت مقبول ہے گیم کا مقصد کیا ہے؟
    آب امریکی فوجی ہیں مسلمان دہشت گردوں کو قتل کرنا ہے مساجد پر بمباری کرنی ہے دنیا کو امن کا گہوارہ بنانا ہے.گیم کے تیسرے پارٹ میں پاکستانی حکومت کو دہشت گردوں گا سپوٹر اور پاکستان کو دہشت گردوں گا گڑھ قرار دیا گیا ہے حکومت پاکستان نے ان گیم پر پابندی آئید کر دی تھی جس کو کسی نے سنجیدہ نہیں لیا اور گیم سرعام بکتی رہی کچھ نے موقع کا فائدہ اٹھا کر بلیک میں بیچا.


    Devil May Cry 3


    [​IMG]
    [​IMG]

    اس گیم میں دو دروازے استعمال کئے گئے ہیں جس میں کعبہ کے دروازے کی تصویر کو ایک ٹاور میں استعمال کیا گیا ہے جس میں شیطانیت قید ہیں اور دوذخ کا کھلنے کا راستہ ہے جس کا صاف مطلب ہے کعبہ کے درواذے کو شیطانیت کا درواذہ قرار دیا گیا ہے اب مسلمان نوجوان کیا سوچتے ہیں ملاحظہ فرمائے.
    [​IMG]

    [​IMG]

    Resident Evil 5
    [​IMG]
    مشہور زمانہ گیم ہے ایک چگہ پر قرآن زمین پر گرا دیکھایا گیا ہے جس پر گزر کر آپ کو جانا ہوگا.
    خود مسلمان گیم کی حمایت کرتے ہے کہ دنیا میں صرف قرآن نہیں جو ایسا دیکھتا ہو اور گیمیں کون سا اصلی ہوتیں ہے فیک ہوتی ہیں اور وہ لوگ تو خود اپنے مذھب کا مزاق اڑاتے ہے ان کی تو عادت ہے یا اگر وہ اتنے برے ہیں تو ان کی بنائی چیزے موبائل کمپوٹر بھی چھوڑ دو پھر رونا رونہ.


    Resident Evil 4

    [​IMG]

    Diablo III
    [​IMG]

    کوئی تصویر جعلی نہیں تمام گیمز میں نے خود دیکھی ہیں اور بہت سی ہیں پر تمام تفصیل کی گنجائش نہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  2. نصر اللہ

    نصر اللہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏دسمبر 19, 2011
    پیغامات:
    1,845
    گڈ بالکل میں نے بھی یہ گیمز دیکھی ہیں اور فیس بک پر بھی کسی بھائی نے یہ تصاویر شئیر کی تھیں جن دنوں یہ ریزیڈنٹ ایول 4 لانچ ہوئی ہے۔ اور یہ بھی ایک تلخ حقیقت ہے کہ مسلمز ان کو کھلتے ہی نہیں انجوائے بھی کرتے ہیں۔ اللہ ھو یرحمنا۔
     
  3. ساجد تاج

    ساجد تاج -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 24, 2008
    پیغامات:
    38,756
    اللہ تعالی ہمیں ہر طرح‌کے شر سے محفوظ رکھے آمین

    جب کوئی دوسرے ملک میں بیٹھا کوئی توہین کرتا ہے تو ہم کس طرح‌آگ بگولہ ہو جاتے ہیں‌لیکن اگر باریکی میں سوچیں‌اور اس گیمز کے بارے سوچیں‌تو کیا ہم خود قرآن پاک کی توہین کے مرتکب نہیں‌پائے جاتے ؟ کیا ہم خود فحاشی اور توہین آمیزوں‌کو ہوا نہیں‌دیتے ؟ کسی کے گھر کو صاف کرنے سے بہتر ہے کہ ہم اپنے گھر کو پہلے صاف کریں
     
  4. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,485
    انا للہ وانا الیہ راجعون۔
     
  5. اہل الحدیث

    اہل الحدیث -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏مارچ 24, 2009
    پیغامات:
    5,050
    کسی زمانے میں میں نے بھی ایسی ہی ایک گیم کھیلی تھی، اس میں‌اسی طرح کی باتیں دیکھ کر ہی میرا دل گیمز سے ہی اچاٹ ہو گیا۔ اسی وجہ سے اللہ کا شکر ہے مجھے یونیورسٹی میں کاونٹر سٹرائیک کی بیماری نہیں لگی
     
  6. زبیراحمد

    زبیراحمد -: ماہر :-

    شمولیت:
    ‏اپریل 29, 2009
    پیغامات:
    3,446
    اللہ کی پناہ
     
  7. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,398
    جزاک اللہ خیرا۔
     
  8. اعجاز علی شاہ

    اعجاز علی شاہ -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 10, 2007
    پیغامات:
    10,323
    بالکل بھائی
    ایک جگہ تو ان شیطان کے پجاریوں نے گیم میں ٹائلیٹ کے شیشے کی فریم پر قرآنی آیات کو لکھا ہے۔ جب زوم کرتے ہیں تب جاکر پتہ چلتا ہے۔
    کال آف ڈیوٹی میں تو مسلمانوں کو قتل کرنے کا مشن دیا جاتاہے۔
    بس گیم کھیلنے کی بیماری میرے اندر بچپن سے ہے لیکن اب زیادہ نہیں کھیلتا۔
     
  9. ام ثوبان

    ام ثوبان رحمہا اللہ

    شمولیت:
    ‏فروری 14, 2012
    پیغامات:
    6,690
    اللہ هر مسلمان کے بچوں میں ان گیموں سے نفرت ڈال دے آمین اللہ اس فتنے سے همارے بچوں کو بچا لے آمین
     
  10. اسامہ طفیل

    اسامہ طفیل نوآموز

    شمولیت:
    ‏اگست 5, 2013
    پیغامات:
    198
    ٹھیک فرمایا آپ نے،ویسے میرے خیال میں اگر کوئی گیم ضرور کھیلنا چاہتا ہے تو دماغی یا ایسی گیمز کھیل لے جس میں تصاویر نیں ہوتیں جیسے mercury وغیرہ
     
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں